پورے شہر کہروڑ پکا سے گندگی ختم کرنے صفائی ستھرائی کرنے والے ادارے کے دفتروں کے نزدیک گندگی فیلتھ ڈپو پر گندگی کے انبار۔

شہریوں اور سرکاری افسروں کی راہ گزر ہونے کے باوجود دفتروں کے نزدیک سے اس گندگی کو ختم نا کیا جا سکا۔ اہل علاقہ کے مکینوں کا میونسپل کمیٹی کہروڑ پکا سے اس گندگی کو ختم کرنے کی پرزور اپیل۔۔۔
تفصیلات کے مطابق عرصہ دراز سے اسسٹنٹ کمشنر آفس کے عقب میں میونسپل کمیٹی کی بلڈنگ سے ملحقہ دیوار کے ساتھ۔ بلمقابل میونسپل پارک۔ میونسپل کمپلیکس بیڈ منٹن کلب۔ میونسپل باڈی بلڈنگ جم کلب۔ شہر کی گنجان آبادی محلہ بخاریاں میں گندگی فیلتھ ڈپو میں بلدیہ کا عملہ صفائی شہر کی تمام گندگی ڈالنے پر باضد۔ اہل محلہ کے مکینوں کو اس گندگی اور مردار جانوروں کی بدبو کی وجہ سے آمد و رفت میں شدید دشواری۔ جس سے صاف ظاہر ھے چراغ تلے اندھیرا
میونسپل کمیٹی کہروڑ پکا جو کہ شہر میں گندگی کو ختم کرنے صفائی ستھرائی تو کرتا ھے مگر افسوس اسسٹنٹ کمشنر آفس کے عقب میں میونسپل کمیٹی بلڈنگ دیوار سے ملحقہ گندگی کے انبار اس گندگی ڈھیر کے سامنے کہروڑ پکا شہر کا اکلوتا خوبصورت میونسپل قاسم پارک جس میں صبح سویرے شہری کثیر تعداد میں واک کرتے ہیں اور شام کے وقت خواتین واک اور درجنوں بچے جھولا جھولتے کھیلنے روزانہ آتے ہیں۔ اس فیلتھ ڈپو کے ساتھ تقریباً دو درجن وثیقہ نویس اسٹام فروشوں کے چمبر قائم ہیں جن میں تقریباً 150 معزز شخصیات کام کرتے ہیں جہاں پر کہروڑ پکا شہر اور گردونواح کے سینکڑوں افراد سائلین اس گندگی کے ڈپو سے گزر کر اسسٹنٹ کمشنر تحصیل دار کی دفتروں میں آتے جاتے ہیں اس گندگی فیلتھ ڈپو کے سامنے میونسپل کمپلیکس بیڈ منٹن حال ھے جس میں بیڈ منٹن کے کھلاڑی گیم کرتے ہیں اور سونے پر سہاگا میونسپل باڈی بلڈنگ جم کلب جس میں تن ساز نوجوان صبح شام اس کلب میں اپنی جان بناتے ویٹ لفٹنگ کرتے نظر آئیں گے جو گندگی کی وجہ سے حفظان صحت اصولوں کے برعکس ھے اس گندگی کے ڈھیر اور مردار جانوروں کی وجہ سے اہل محلہ بخاریاں والا میں ڈینگی ملیریا اور دیگر محلق بیماریاں پھیلنے کا شدید اندیشہ ھے اہل علاقہ کے مکینوں نے ڈی سی لودھراں۔ اے سی کہروڑ پکا۔ چیف آفیسر میونسپل کمیٹی کہروڑ پکا۔ محکمہ صحت ہیلتھ کے وفاقی صوبائی وزیر اور دیگر افسران بالا سے پرزور مطالبہ کرتے ھوئے اپیل کی ھے عرصہ دراز سے قائم اس گندگی فیلتھ ڈپو پر مردار جانوروں کی بدبوسے ہمیشہ ہمیشہ کے لئے نجات دلائی جائے تاکہ ھم بھی سوک کا سانس لے سکیں۔۔۔۔

کہروڑ پکا۔۔۔۔۔( جاوید بخاری)

شیئرکریں